فم معدہ کا حیرت انگیز مؤثر مرض

( محمد شاہنواز‘ کوہاٹ)
میرے ایک پرانے دوست اور ہمسائے کی بیوی کو وجع الفواد عارضہ تھا‘ وہ فم معدہ کی درد سے مری جارہی تھی۔ درد کی لہر اُٹھتی تو نوبت بے ہوشی تک پہنچ جاتی۔ پیٹ پر ہاتھ رکھ کر دوہری ہوجاتی اور زور و زور سے رونا شروع کردیتی۔ فوری طور پر ہسپتال میں داخل کرایا جاتا۔ انجکشن‘ ڈرپوں اور ہائی پوٹینسی پین کلر استعمال کرنے کے بعد کچھ افاقہ ہوتا لیکن دوسرے دن پھر وہی کیفیت۔۔۔ دو سال گزر گئے۔ گھر کی خوشحالی ختم ہوگئی۔ جو کچھ تھا اس کے مرض پر لگ گیا۔ زیور اور فرنیچر بھی بیچ ڈالا‘ نوبت قرض تک پہنچ گئی۔
پورے گھرکاماحول اداس اور پریشان تھا۔ معلوم ہوا کہ کسی نے تعویذ ڈالے ہیں اور problem جن بھوت اور سایہ کا ہے پھر اس کا شوہر اسے دور دراز مختلف پیروں‘ فقیروں اور عاملوں کے پاس لیکر گیا لیکن اتنا تو اسے ماڈرن doctorوں اور چمکتے دمکتے ہسپتالوں نے نہ لوٹا جتنا نام نہاد عاملوں نے لوٹااور مزید کئی وہموں میں مبتلا کردیا۔ ایک سال مزید گزر گیا۔ جب ہر طرف سے مایوس اور پریشان ہوگئے تو میرے پاس آئے لیکن مرض کرانے نہیں بلکہ مالی امداد کیلئے۔ میں اُن کی پوری داستان پہلے سے ہی جانتا تھا۔ اُن کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کیا۔ وہ میری ہمسائیگی میں ہی رہتے تھے۔ اس کا شوہر بچپن میں میرے ساتھ ایک ہی سکول میں پڑھتا تھا۔ جب وہ اتنی اتنی اونچی جگہوں اور بڑے بڑے doctorز سے مرض کررہے تھے‘ بھلا مجھے کب خاطر میں لاتے۔ لیکن اب وہ دونوں بھی مایوس ہوچکے تھے۔ میں نے کہا میں تمہیں اس مرض کی دوائی بناکردوں؟
پھر میں نے سیالکوٹ میں اپنے doctor دوست سے فون پر رابطہ کیا۔ doctor صاحب نے مریض کی کیفیت سن کر کہا ان کو میرے پاس بھیجنے کی ضرورت نہیں‘ آپ خود ان کا مرض کریں۔ نسخہ میں تحریر کردیتا ہوں۔ doctor صاحب نے مجھے سادہ سا نسخہ لکھوایا۔ میں نے اسی دن بنا کرمریضہ کو استعمال کروایا۔ وہ نسخہ کیا تھا؟ جادو کی ایک پڑیا تھی کہ مریض کو پہلی خوراک سے ہی آرام محسوس ہونے لگا۔ صبح‘ دوپہر‘ شام ایک ایک پڑیا نیم گرم پانی(water) سے دی گئی۔ آج پانچ ہفتے گزر چکے ہیں‘ صرف ایک بار مریضہ کو معمولی درد کا احساس ہوا تھا وگرنہ وہ بالکل ٹھیک ہے اور صرف وہی مرض ابھی تک جاری رکھے ہوئے ہے۔ وہ اور اس کا شوہر گھر گھر میری اس دوائی کا چرچا کررہے ہیں۔
نسخہ یہ ہے:۔ ھوالشافی: ثناء مکی2 تولہ‘ سونف 1 تولہ‘ مصطگی رومی 2 تولہ‘ مصری 6 تولہ۔ تمام ادویہ کا سفوف بنالیں۔ صبح‘ دوپہر‘ شام آدھا tea spoon پانی(water) سے لیں۔

Leave a Reply

Close Menu
×
×

Cart