Breaking News
Home / قبض / qabaz ka ilaaj

qabaz ka ilaaj

قبض !وجہ‘ احتیاط اور علاج
قبض دیگر بیماریوں کا پیش خیمہ بن سکتا ہے، اس لئے احتیاط لازم ہے۔ آسان گھریلو تراکیب اور غذائی تبدیلیوں کے ذریعے اس پریشانی سے محفوظ رہا جاسکتا ہے۔
سائنس کا یہ ایک مسلمہ اصول ہے کہ سردی سے چیزیں سکڑتی ہیں اور گرمی سے پھیلتی ہیں اور یہ کیفیات موالید ثلاثہ یعنی نباتات، جمادات اور حیوانات میں سے کسی پر بھی بالفعل یا بالقویٰ اثر انداز ہوں تو ان کے مخصوص اثرات سکڑنا اور پھیلنا اشیاء موالید ثلاثہ پر بھی ضرور مرتب ہوں گے یعنی سردی کے  انداز ہونے سے متعلقہ چیزیں سکڑیا یا انقباض پیدا ہوگا اور حرارت و گرمی سے وہ چیز پھیلے گی۔
بالکل اسی طرح ان کیفیات کے اثرات بدن انسانی پر بھی مرتب ہوتے ہیں۔ ہماری تحقیقات کے مطابق جب سردی کی کیفیت آنتوں پر بھی اثر انداز ہوتی ہے تو وہاں سکڑ بستگی یا انقباضی صورت پیدا ہوجاتی ہے۔ اسی انقباضی صورت کو قبض کہتے ہیں۔ سردی سے چیزیں سکڑتی ہیں اور گرمی سے پھیلتی ہیں بالکل اسی اصول کے تحت سردی سے قبض پیدا ہوتا ہےاور حرارت سے قبض کا علاج کیا جاتا ہے چونکہ سردی سے آنتوں کے اندر سکڑیا انقباض پیدا ہوجاتا ہے اور اگر اس سکڑیا انقباض کو ختم کردیا جائے تو آنتوں کی بستگی دور ہوکر قبض کا ازالہ ہوجائے گا۔ یاد رہے کہ یہ اسی صورت میں ممکن ہے کہ جب امعا میں حرارت پیدا کی جائے چونکہ حرارت سے آنتوں کا سکڑیا انقباض دور ہوکر ان کے پھیلنے کی قوت بحال ہوجائے گی، جس سے کہ وہ اپنے طبعی افعال سرانجام دے سکیں گی تو گویا حقیقت میں حرارت کا پیدا کرنا ہی قبض کا یقینی اورشافی علاج ہے جوکہ ہم اپنے خاص اصول کے تحت پیدا کرتے ہیں۔ یعنی جگر کے فعل کو تیز کرتے ہیں جوکہ صفرا کو پیدا کرتا ہے اور جب صفرا آنتوں پر گرے گا، یا اثر انداز ہوگا تو فضلہ آسانی سے خارج ہوجائے گا۔
قبض ایک ایسی حالت ہے کہ جس میں اجابت معمول کے مطابق نہیں ہوتی بلکہ فضلہ اپنی مقدار کے لحاظ سے کم خارج ہوتا ہے پس اس خلاف معمول حالت کو اردو میں قبض عربی میں قبض الامعا اور انگریزی میں کانسٹی پیشن کہتے ہیں اور اس حالت میں خاص طور پر انتڑیوں کے اندر گرفتگی، بستگی، سکڑائو اور انقباض ہوتا ہے اسے ہی قبض کہتے ہیں جوکہ خشکی و عضلاتی تحریک کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ اسباب: کاہلی و سستی، قوت کا بے جا تصرف، ثقیل اور غیر ہاضم غذائوں کا استعمال، رفع حاجت کے وقت اجابت روکے رکھنا، آنتوں کی حرکت دودیہ اور قوت دافعہ کا کمزور ہونا، کثرت تمباکو خوری، سگریٹ نوشی، شراب نوشی، قابض و حابس ادویہ مثلاً وٹامن سی کیلشیم اور اس کے مرکبات، افیون، مارفیا، بھنگ، چرس اور فولادکے مرکبات کا بے جا استعمال، تمام خشک اور ترش اشیاء کا بے جا استعمال، یورک ایسڈ کی زیادتی، پروٹین کا بے جا استعمال، پیاز، اچار، بڑا گوشت، ڈبل روٹی، نان کلچہ، فٹ پاتھ کے پراٹھے، کباب اور تمام ترش اشیاء کھانا کھاکر فوراً نہانا، کھانا کھانے کے فوراً بعد اور بیماری کی حالت میں جماع کرنا قبض کے اسباب ہیں۔
علامات:اجابت خلاف معمول دوسرے تیسرے روز آتا ہے بعض اوقات جبکہ آنتوں میں انتہائی خشکی سردی کا غلبہ ہوتا ہے۔ اجابت کھل کر نہیں آتی، خشکی کی وجہ سے اجابت میں خون بھی آنے لگتا ہے۔غذائی علاج:مغز بادام، مکھن، حلوہ بادام، کھجور، مغزیات کا حریرہ، مربہ گاجر یا ٹینڈے کا سالن، مرغ گوشت، بکرے کاگوشت ، بھنڈی، سبز مرچ کائیں، دال مونگ، ساگ، میتھی، گاجر، کالی مرچ اور ادرک و لہسن وغیرہ ڈال کر استعمال کریں۔ انگور شیریں، امرود شیریں، بادام، خوبانی، شہتوت، چلغوزہ، خربوزہ شیریں کھانا چاہیے ۔ دائمی قبض والے مریض کو صبح و شام موسم گرما میں گرم پانی اور موسم سرما میں گرم ریت کی ٹکور ضروری کرنی چاہیے۔ ریت کو نیم گرم کرکے کمر اور پیٹ سے نیچے ٹکور کریںیا نیچے بچھا کر اوپر لیٹ جائیں۔ اس عمل سے سوزش بہت جلد ختم ہوکر صحت بحال ہونے لگتی ہے۔ قبض کی صورت میں مندرجہ ذیل غذا و اشیاء سے پرہیز کریں۔اچار، پکوڑے، بڑا گوشت، نان کلچہ، پیاز، سموسے، ابلے انڈے، فٹ پاتھ والے پراٹھے، چپلی کباب، دہی، لسی، بینگن، چنے، مچھلی، مکئی، باجرہ، مسور کی دال، ٹماٹر، کچنار، مونگ پھلی، ناریل، جامن، فالسہ، بیر، وٹامن سی اور بی کے مرکبات کیلشیم اور فولاد نیز ان کے مرکبات سے پرہیز کریں۔گھریلو علاج:پکے ہوئے ٹماٹر کا ایک کپ رس پینے سے آنتوں میں پھنسا ہوا فضلا خارج ہوجاتا ہے اور قبض دور ہوجاتی ہے۔ نہار منہ تھوڑا سا گرم پانی پینے سے بھی قبض دور ہوجاتی ہے۔ تھوڑی سی سونف دودھ یا نیم گرم پانی کے ساتھ لینے سے قبض میں افاقہ ہوتا ہے

About admin

Check Also

قبض کا نسخہ

: ملک عبداللہ صاحب نے میانوالی سے ادارہ کو بھیجا ہے لکھتے ہیں کہ پرانی ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *